پنجاب حکومت کی رکشا چھوڑ، ٹیکسی پکڑ اسکیم
ورون دھون نے سلمان خان کی جگہ لے لی!!
ضرب عضب سے کراچی آپریشن تک۔۔ ڈی جی آئی ایس پی آر کے انکشافات
بیمار برطانوی شہری نے ڈاکٹر کی مدد سے اپنی جان لے لی
آرمی چیف نے12دہشت گردوں کی پھانسی کی توثیق کردی
نریندرمودی کی اہلیہ '’شادی‘ ثابت کرنے کیلئے کوشاں
پرویز مشرف کا بلڈپریشر ہائی ہوگیا، پی این ایس شفا منتقل

 

 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
  ادارتی صفحہ  
 
 
Triology of agony...کشور ناہید...لیاری کا حزنیہ
 
دمکتے مہر و وفا کے بادل
کفن کی دہلیز پہ اتر کے
جھلس گئے ہیں
وہ جو شادیاں تھی
سلگتے جسموں، ابلتے خوں ہیں
بدل گئی ہیں
وہ جو خواب رکھے نشیمنوں میں
انہیں جلایا ہے اور ضیافتِ شام کی گئی ہے
وہ جو صبح سورج سے جاگتی تھی
اسے بھی خود کش بموں کی مٹھی میں دے دیا ہے
وہ پھول جیسے حسیں بچے بھی
خوں کی بارش میں سو رہے ہیں
ہر ایک آنگن، ہر اک گلی میں
سروں پہ اوڑھے وہ بیوگی کی سفید چادر
صحن میں بیٹھی یہ پوچھتی ہے
مجھے دلاسہ دیا گیا ہے
کہ وہ تو جنت چلا گیا ہے
میں صبر کی عمر کیسے کاٹوں
میں اپنے بچوں کو مدرسے میں نہ جانے دونگی
مجھے تو ان کو
حسیں جواں ان کے باپ جیسا ہی
دیکھنا ہے
پہاڑ جیسی یہ عمر کاٹوں تو کیسے کاٹوں!
………………
ہزارہ بستی والوں کاحزنیہ
وقت کا دریا خون میں لپٹا
میرے شہر میں ٹھہرا ہے
سال کے ہر اک سانس میں خوں ہے
ہر دروازے، ہر چوکھٹ پہ خون کے دھبے
پوچھ رہے ہیں
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جس میں ہنستے پھول سے بچے تھے
مہندی رچائے سہاگنیں تھیں
اور کڑیل جواں ایسے تھے
ان کو دیکھ دعائیں
ہونٹوں پہ آجاتی تھیں
اب تو کفن کے بادلوں سے یہ شہر اٹا ہوا ہے
ہر گھر میں کھلنڈرا بچہ ڈرا ہوا ہے
کیا یہ بستی وہی بستی ہے
جہاں چراغ قبروں پہ نہیں
گھروں میں جلا کرتے تھے
جہاں اجلی عورتیں ہنستی تھیں
اور بوڑھے باپ کے کندھے بھی چوڑے تھے
آج سبھی دالانو میں سائے گھوم رہے ہیں
کوئی دلاسہ دینے والا حرف
کسی دامن میں نہیں ہے۔
……………
شامی نقل مکانیوں کا حزنیہ
ہمیں شہر بدر کرنے کو کہا تو کسی نے نہیں تھا
گولیوں کی بوچھاڑ میں جب اپنے
اتنی دور ہوئے کہ ہمیں لمبی لمبی قبریں بناکر
انہیں دفن کرنا پڑا
جب خوف کے مارے
ہماری چھاتیوں کا دودھ خشک ہوگیا
جب ہماری خیمہ بستیوں کو نذر آتش
کیا گیا
جب زمین کا کوئی کونہ ہمیں پناہ دینے سے
گریزاں تھا
اے ہماری وطن شام کی سرزمین
ہماری آبا، بی بی زینب کی سرزمین
ہمیں مجھے الوداع کہنا پڑا
یہ ہمارے قدموں نے مجھے الوداع کہا ہے
ہماری آنکھیں ابھی تک
تیری انگور کی بیلوں میں ٹھہری ہوئی ہیں
شفتالو کا ذائقہ ابھی تک ہماری زبان پر ہے
طرح طرح کے خوان آتے ہیں
لوگ چھپ کر اور ظاہر میں بھی
ہمارے لئے زیتون اور عرق لے کر آتے ہیں
مگر اے ہماری بستی، ہماری خیمہ بستی
ہمیں وہ پیاس یاد آتی ہے
اس زمین کی خوشبو یاد آتی ہے
جہاں ہم نے گھٹنیوں چلنا
سیکھا تھا اور ہم تیری مٹی سے کھیلتے تھے
ہماری مسکراہٹ اسی دن واپس آئے گی
جب ہمارے قدم
اے ہمارے وطن سرزمین شام، شہر دمشق
تو ہمارا استقبال دف بجا کر کر گیا
Print Version       Back  
جو تہذیب و تمدن کی امیں تھیں
مسلسل کم وہ ذاتیں ہورہی ہیں
ادب پر سوگ طاری ہے لگاتار
ادیبوں کی وفاتیں ہورہی ہیں
SMS: #ANC (space) message & send to ...
 
 
 
SMS: #FCC (space) message & send to 8001
[email protected]
امریکہ،پاکستان اور چین کی زیر نگرانی افغان امن کامیاب ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔لگتا ہے کہ ...
 
 
 
SMS: #TBC (space) message & send to 8001
[email protected]
ہم سب بے خبر ہیں کہ ’’موو آن پاکستان‘‘ نامی تنظیم اچانک کیسے اور کہاں سے نمودار ہوئی جس نے ...
 
 
 
SMS: #MBC (space) message & send to 8001
[email protected]
وہ گورنمنٹ کالج لاہور(جی سی یو) میں پڑھتا تھا، اسے سیاست سے بھی دلچسپی تھی۔ مجھے اس کے ...
 
 
 
SMS: #HMA (space) message & send to 8001
امریکہ میں رواں سال ماہ نومبر میں ہونیوالے صدارتی انتخابات میں ڈیموکریٹک پارٹی ہی کی طرف سے امریکہ کی صدارت کیلئے نامزدگی کے ...
 
 
 
SMS: #PIB (space) message & send to 8001
چلنا، چلنا مدام چلنا کام ہے صبح شام چلنا
وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے قطر کے ساتھ ایل این جی گیس کا 15سالہ معاہدہ ...
 
 
 
[email protected]
SMS: #AHQ (space) message & send to 8001
مشتاق احمد یوسفی نے ایک جگہ لکھا ہے کہ ’’ہم نے غالب کو جب کبھی پڑھا، وہ ہمیں ہر دفعہ نیا ...
 
 
 
SMS: #BGC (space) message & send to 8001
[email protected]
ـ’’خبردار!کیمرے کی آنکھ آپ کو دیکھ رہی ہے ۔اگر آپ نے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کی تو ...