Sabooq Syed - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
اتوار یکم رمضان المبارک 1438ھ 28 مئی 2017ء
سبوخ سید
September 26, 2016
اسٹیٹ بینک کی نئی مانیٹری پالیسی

اسٹیٹ بینک نے آئندہ دو ماہ کے لئے نئی مانیٹری رپورٹ جاری کر دی ہے جس کے مطابق شرح سود 5.75فیصد کو برقرار رکھا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ درآمدات اور برآمدات میں عدم توازن کی وجہ سے ملکی معیشت کو بڑا خطرہ درپیش ہے تاہم سی پیک منصوبوں میں تیزی سے معیشت میں وسعت آنے کی امید ہے۔ رپورٹ کے مطابق زر مبادلہ کے ذخائر ریکارڈ سطح پر آ گئے ہیں...
October 28, 2015
سعید اظہر کے جواب میں

محترم محمد سعید اظہر سے تعارف اور تعلق کو ایک زمانہ ہوگیا ،البتہ ملاقاتوں میں طویل وقفہ فاصلوں کا موجب بنا۔ ایک زمانہ وہ تھا کہ ہم ایک ہی سیاسی شاہراہ کے مسافر تھے اور علامہ محمد سعید اظہر کے فرمودات ذہن کو جلا بخشتے تھے، محترم سعید اظہر صاحب اور میں ایک ہی ہفت روزہ سے منسلک تھےالبتہ محمد سعید اظہرجنرل ضیاء الحق کے دور حکومت میں...
February 24, 2015
دینی مدارس کا روشن چہرہ

سانحہ آرمی پبلک اسکول پشاور کے بعد ملک میں دہشت گردی اور انتہاء پسندی کو روکنے کےلئے قومی ایکشن پلان کے تحت پاکستان میں دینی مدارس کے نصاب اور رجسٹریشن کے عمل پر از سر نو غور کرنے کا پروگرام بنا ۔ وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کہتے ہیں کہ دس فیصد مدارس دہشت گردی اور انتہا پسندی میں ملوث ہیں تاہم انہوں نے آج تک ان مدارس کی...
January 25, 2015
جامعہ ملی یکجہتی کونسل

قاضی حسین احمد کا جماعت اسلامی کے حوالے سے کردار کچھ لوگوں کے ہاں قابل تحسین رہے گا اور کچھ کے ہاں شاید اس پر کئی سوال ہوں ،انسانوں کے بارے میں زندہ معاشروں میں اس قسم کی بحثیں چلتی رہتی ہیں اور چلنی بھی چاہیئں کیونکہ مضبوط سماج اس قسم کی بحثوں سے ہی پرورش پاتے ہیں ۔میرے پاس قاضی حسین احمد کو یاد کرنے کے لئے ملی یکجہتی کونسل کے قیام...
December 26, 2014
پالیسی شفٹ

صرف قصہ خوانی بازار پشاور کے ایک کلومیٹر کے رقبے میں اب تک 21 دھماکے ہو چکے ہیں ۔ پاکستانی شہر اب اپنی مخصوص ثقافت ،زبانوں ،کھانوں ،عمارتوں یا قدرتی مناظر کی وجہ سے نہیں پہچانے جاتے ،بلکہ دہشت گردی کا کوئی نہ کوئی واقعہ اب ان شہروں کی شناخت بن چکا ہے ۔ بد قسمتی سے ہم ایک ایسے ملک میں رہ رہے ہیں جہاں روز لاشیں اٹھائی جاتی ہیں ۔ ہم نے...
September 07, 2013
سوال

وہ عوام جنہوں نے مسلط کی گئی جنگ کی صورت میں گزشتہ تیرہ برسوں میں ناکردہ گناہوں کی سزا بھگتی، جنہوں نے اپنے جگر گوشوں کو اپنے ہاتھوں سے قبر کی پاتال میں گم کر دیا ۔جنہوں نے ڈرون اور خودکش حملوں کا عذاب سہا ۔جنہوں نے نوّے سالہ بابے سے لیکر نومولود بچے تک کی کٹی اور جلی لاشوں کو اپنی آنکھوں سے دیکھا اور آنسووٴں کا سمندر سینے میں غرق کر...